Ab ke tajdeed-e-wafa ka nahi imkaan jana - Ahmad Faraz

::: Ahmad Faraz :::

Ab ke tajdeed-e-wafa ka nahi imkaan jana - Ahmad Faraz

Ab ke tajdeed-e-wafa ka nahi imkaan jana - Ahmad Faraz

"Ab ke tajdeed-e-wafa ka nahi imkaan jana"(اب کے تجدید وفا کا نہیں امکاں جاناں) , this Poetry lyrics are narrated by "Muhammad Faisal", and this Poetry lyrics are penned by "Ahmad Faraz"(احمد فراز), and this video produced by Khawab Darichy.

Ab Ke Tajdid-e-wafa Ka Nahin Imkan Jaanan 
Yaad Kya Tujh Ko Dilaen Tera Paiman Jaanan 
***
Yunhi Mausam Ki Ada Dekh Ke Yaad Aaya Hai 
Kis Qadar Jald Badal Jate Hain Insan Jaanan 
***
Zindagi Teri Ata Thi So Tere Nam Ki Hai 
Hum Ne Jaise Bhi Basar Ki Tera Ehsan Jaanan 
***
Dil Ye Kahta Hai Ki Shayad Hai Fasurda Tu Bhi 
Dil Ki Kya Baat Karen Dil To Hai Nadan Jaanan 
***
Awwal Awwal Ki Mohabbat Ke Nashe Yaad To Kar 
Be-piye Bhi Tera Chehra Tha Gulistan Jaanan 
***
Aakhir Aakhir To Ye Aalam Hai Ki Ab Hosh Nahin 
Rag-e-mina Sulag Utthi Ki Rag-e-jaan Jaanan 
***
Muddaton Se Yahi Aalam Na Tawaqqo Na Umid 
Dil Pukare Hi Chala Jata Hai Jaanan Jaanan 
***
Ab Ke Kuchh Aisi Saji Mahfil-e-yaran Jaanan 
Sar-ba-zanu Hai Koi Sar-ba-gareban Jaanan 
***
Har Koi Apni Hi Aawaz Se Kanp Uthta Hai 
Har Koi Apne Hi Sae Se Hirasan Jaanan
***
Jis Ko Dekho Wahi Zanjir-ba-pa Lagta Hai 
Shahr Ka Shahr Hua Dakhil-e-zindan Jaanan 
***
Hum Bhi Kya Sada The Hum Ne Bhi Samajh Rakkha Tha 
Gham-e-dauran Se Juda Hai Gham-e-jaanan Jaanan 
***
Hum Ki Ruthi Hui Rut Ko Bhi Mana Lete The 
Hum Ne Dekha Hi Na Tha Mausam-e-hijran Jaanan 
***
Hosh Aaya To Sabhi Khwab The Reza Reza 
Jaise Udte Hue Auraq-e-pareshan Jaanan 

---- Ahmad Faraz ----

اب کے تجدید وفا کا نہیں امکاں جاناں

یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں

***

یوں ہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے

کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں

***

زندگی تیری عطا تھی سو ترے نام کی ہے

ہم نے جیسے بھی بسر کی ترا احساں جاناں

***

دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہے فسردہ تو بھی

دل کی کیا بات کریں دل تو ہے ناداں جاناں

***

اول اول کی محبت کے نشے یاد تو کر

بے پیے بھی ترا چہرہ تھا گلستاں جاناں

***

آخر آخر تو یہ عالم ہے کہ اب ہوش نہیں

رگ مینا سلگ اٹھی کہ رگ جاں جاناں

***

مدتوں سے یہی عالم نہ توقع نہ امید

دل پکارے ہی چلا جاتا ہے جاناں جاناں

***

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یاراں جاناں

سر بہ زانو ہے کوئی سر بہ گریباں جاناں

***

ہر کوئی اپنی ہی آواز سے کانپ اٹھتا ہے

ہر کوئی اپنے ہی سائے سے ہراساں جاناں

***

جس کو دیکھو وہی زنجیر بہ پا لگتا ہے

شہر کا شہر ہوا داخل زنداں جاناں

***

ہم بھی کیا سادہ تھے ہم نے بھی سمجھ رکھا تھا

غم دوراں سے جدا ہے غم جاناں جاناں

***

ہم کہ روٹھی ہوئی رت کو بھی منا لیتے تھے

ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسم ہجراں جاناں

***

ہوش آیا تو سبھی خواب تھے ریزہ ریزہ

جیسے اڑتے ہوئے اوراق پریشاں جاناں

Post a Comment

Please do not enter any spam link in the comment box.

Previous Post Next Post