Bekhud Kiye Dete Hain Andaaz-e-Hijabana naat lyrics

Image Source - YouTube | Image by - Qadri Ziai Sound

Bekhud Kie Dete Hain Andaz-e-Hijabana Naat with Lyrics

Bekhud Kie Dete Hain Andaz-e-Hijabana Naat is recited by Muhammad Owais Raza Qadri, lyrics of this naat is penned by Bedam Shah Warsi. This beautiful naat Bekhud Kiye Dete Hain Andaaz-e-Hijabana is produced by Qadri Ziai Sound.
Bekhud Kie Dete Hain Andaaz-e-Hijabana
Aa Dil Mein Tujey Rakh lun Ae Jalwa-e-Janana
***
Itna To Karam Karna Ae Chasham-e-Karimana
Jab Jaan Labon Par Ho Tum Samney Aa janaa
***
Kyun Aankh Milai Thi, Kyun Aag Lagai Thi
Aab Rukh Ko Chupa Baithey Kar Ke Mujhey Deewana
***
Jee Chahta Tofay Mein Bhaijoon Main Unhain Ankhain
Darshan Ka To Darshan Ho, Nazrane Ka Nazrana
***
Kia Lutf Ho Mehshar Mein Qadmon Mein Giru Aa Ke
Sarkaar Kehein Dekho Deewana Hai Deewana
***
Main Khoush-o-Hawaas Apne Iss Baat Pe Kho Baitha
Khans Kar Jo Kaha Tu Ne, Aaya Mera Deewana
***
Pieneye Ko To Pie Loon Gha Per Araz Zara Si Hai
Ajmaair Ka Saaqi Ho, Baghdaad Ka Maikhana
***
Duniya Mein Mujhay Tune Ghar Apne Bulaya Hai
Mehshar Mein Bi Keh Daina, Yeh Hai Mera Deewana
***
Bedam Meri Qismat Mein Chakaar Hain Usi Dar Ke
Chuta Hai Na Chute Gha, Mujse sang-e-Dar-e-Janana
***
Har Phool Mein Bu Teri Har Shama Mein Zo Teri
Bulbul hai Tera Bulbul, Parwana Hai Tera Perwana
***
Jiss Jah Nazar Aate Ho Sajday Wahie Karta Hun
Iss Sey Nahin Kuch Matlab, Khabaa Hai Ya But-khana
***
Saaqi Tere Aatey He Yeh Josh Hai Masti Ka
Shisshay Pe Gira Shissha, Paimane Pe Paimana
***
Maloum Nahie Bedam Mein Kwon Hun Aur Kiya Hoon
Youn Apnon Mein Apna Hun, Baiganoon Mein Baigana

---- Bedam Shah Warsi ----


بے خود کیے دیتے ہیں انداز حجابانہ

آ دل میں تجھے رکھ لوں اے جلوہء جانانہ

***

اتنا کرم کرنا اے چشمِ کریمانہ

جب جان لبوں پر ہو تُم سامنے آ جانا

***

کیوں آنکھ ملائی تھی ، کیوں آگ لگائی تھی

اب رُخ كو چھپا بیٹھے کر كے مجھے دیوانہ

***

جی چاہتا ہے تحفے میں بیھجوں میں اُنہیں آنکھیں

درشن کا تو درشن ہو نزرانے کا نذرانہ

***

کِیا لطف ہو محشر میں قدموں میں گرو آ كے

سرکا ر کہیں دیکھو دیوانہ ہے دیوانہ

***

میں ہوش حواس اپنے اِس بات پہ کھو بیٹھا

ہنس کر جو کہا تو نے آیا میرا دیوانہ

***

پینے کو تو پی لوں گا پر عرض ذرا سی ہے

اجمیر کا ساقی ہو بغداد کا میخانہ

***

دنیا میں مجھے تو نے گھر اپنے بلایا ہے

محشر میں بھی کہہ دینا یہ ہے میرا دیوانہ

***

بیدمؔ میری قسمت میں چکر ہیں اُسی در کے

چُھوٹا ہے نہ چُھوٹے گا سنگِ درِجانانہ

***

ہر پھول میں بُو تیری، ہر شمع میں ضُو تیری

بلبل ہے تیرا بلبل، پروانہ تیرا پروانہ

***

جس جاء نظر آتے ہو سجدے وہی کرتا ہوں

اس سے نہیں کچھ مطلب کعبہ ہو یا بُت خانہ

***

ساقی تیرے آتے ہی یہ جوش ہے مستی کا

شیشے پہ گرا شیشہ پیمانے پہ پیمانہ

***

معلوم نہیں بیدمؔ میں کون ہوں اور کیا ہوں

یوں اپنوں میں اپنا ہوں بیگانوں میں بیگانہ


---- بیدم شاہ وارثی ----

Post a Comment

Please do not enter any spam link in the comment box.

Previous Post Next Post