Wahi Pyaas Hai Wahi Dasht Hai Wahi Gharana Hai || Iftikhar Arif Poetry

::: Iftikhar Arif :::

Wahi Pyaas Hai Wahi Dasht Hai Wahi Gharana Hai || Iftikhar Arif Poetry
Waahi Pyaas Hai Waahi Dasht Hai Waahi Gharana Hai || Iftikhar Arif Poetry
Waahi Pyaas Hai Waahi Dasht Hai Waahi Gharana Hai || Iftikhar Arif Poetry

Waahi Pyaas Hai Waahi Dasht Hai Waahi Gharana Hai Poetry lyrics are narrated by Usmaan Wahid, and this Poetry lyrics are penned by Iftikhar Arif. This video is production of Khawab Darichy.

Waahi Pyass Hai - Waahi Dasht Hai - Waahi Gharana Hai
Mashkizye Se - Teer Ka Rishta Bhuat Purana Hai 
***
Subh Savere Ran Parna Hai - Aur Ghumsan Ka Ran 
Raton Raat Chala Jaye - Jiss Jiss Ko Jaana Hai
***
Ek Charagh - Aur Ek Kitab - Aur Ek Umeed-e-Asassa
Us Ke Bad To Jo Kuch Hai - Who Sab Afsana Hai
***
Dariya Par Qabza Tha Jiss - Ka Us Ki Pyass Azaab
Jiss Ki Dhalen Chamak Rahie Thi - Wohi Nishana Hai
***
Kasa-e-Sham Mein Suraj Ka Sar - Aur Awaz-e-Azan 
Aur Awaz-e-Azan Kahti Hai - Farz Nibhana Hai 
***
Sab Kahte Hain - Aur Koi Din Ye Hangama-e-Dahr
Dil Kehta Hai - Ek Musafir Aur Bi Aana Hai
***
Ek Jazira - Us Ke Agye Pichye Saat Samundar
Saat Samundar Paar Sunaa Hai - Ek Ḳhazana Hai

---- Iftikhar Arif ----


وہی پیاس ہے وہی دشت ہے وہی گھرانا ہے 

مشکیزے سے تیر کا رشتہ بہت پرانا ہے 

*** 

صبح سویرے رن پڑنا ہے اور گھمسان کا رن 

راتوں رات چلا جائے جس جس کو جانا ہے 

*** 

ایک چراغ اور ایک کتاب اور ایک امید اثاثہ 

اس کے بعد تو جو کچھ ہے وہ سب افسانہ ہے 

*** 

دریا پر قبضہ تھا جس کا اس کی پیاس عذاب 

جس کی ڈھالیں چمک رہی تھیں وہی نشانہ ہے 

*** 

کاسۂ شام میں سورج کا سر اور آواز اذاں 

اور آواز اذاں کہتی ہے فرض نبھانا ہے 

*** 

سب کہتے ہیں اور کوئی دن یہ ہنگامۂ دہر 

دل کہتا ہے ایک مسافر اور بھی آنا ہے 

*** 

ایک جزیرہ اس کے آگے پیچھے سات سمندر 

سات سمندر پار سنا ہے ایک خزانہ ہے 


---- افتخار عارف ---- 



Post a Comment

Please do not enter any spam link in the comment box.

Previous Post Next Post